یورپی یونین چھوڑی تو ٹیکس بڑھیں گے: اوسبورن

جارج اوسبورن تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جارج اوسبورن کہتے ہیں کہ یورپی یونین سے نکلنے کا فیصلہ ناقابلِ واپسی ہو گا

برطانیہ کے وزیرِ خزانہ جارج اوسبورن کہتے ہیں کہ اگر برطانیہ یورپی یونین سے نکلنے کے لیے ووٹ دیتا ہے تو انھیں ہنگامی بجٹ میں 30 ارب پاؤنڈ کا ’بلیک ہول‘ یا خسارہ پورا کرنے کے لیے عوامی اخراجات کی مدد میں کمی کرنا پڑے گی اور ٹیکسوں میں اضافہ کرنا پڑے گا۔

٭ بورس جانسن کا یورپی یونین کا ہٹلر سے موازنہ

چانسلر نے کہا کہ اس میں آمدنی اور وراثت کے ٹیکسوں میں اضافہ اور این ایچ ایس کے بجٹ میں کٹوتی بھی شامل ہے۔

لیکن 57 ٹوری ممبر پارلیمان کہتے ہیں کہ اگر انھوں نے این ایچ ایسڑ پولیس اور سکولوں کے اخراجات پر ٹیکس لگائے تو ان کی پوزیشن غیر مستحکم ہو جائے گی۔

یورپی یونین چھوڑنے یعنی ’ووٹ لیو‘ کے حمایتی دوسرے گروہ پر بہت تنقید کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ’قیامت کی پیشنگوئیاں‘ بالکل بےبنیاد ہیں۔

برطانیہ 23 جون کو یورپی یونین میں رہنے یا اسے چھوڑنے پر ووٹ ڈالے گا۔

ریفرنڈم کے متعلق مزید رپورٹس

  • اس صورت میں کہ برطانیہ یورپی یونین چھوڑنے کے لیے ووٹ ڈالتا ہے ’ووٹ لیو‘ نے حکومت کے لیے ایک نقشۂ راہ تیار کیا ہے
  • دنیا کی مہنگی ترین گاڑیاں اور انجن بنانے والی کمپنی رولز رائس نے اپنے سٹاف سے کہا ہے کہ وہ یورپی یونین میں رہنے کی حمایت کرتی ہے۔
  • سکاٹ لینڈ کی فرسٹ منسٹر نکولا سٹروجن نے کہا ہے کہ یورپی یونین چھوڑنے کے ووٹ سے دائیں بازو کے ٹوری حمایتیوں کے اقتدار پر قبضے کا خطرہ ہے۔

جارج اوسبورن نے بی بی سی کے ریڈیو 4 کے ٹوڈے پروگرام کو بتایا کہ یورپی یونین کو چھوڑنے کا فیصلہ ناقابلِ واپسی ہو گا جس سے اقتصادی عدم استحکام پیدا ہو جائے گا اور اس کے بعد برطانیہ کے پاس کوئی اقتصادی پلان نہیں رہ جائے گا، جو حکومت سے فوری طور پر ردِ عمل چاہے گا۔

انھوں نے کہا کہ اس اقتصادی ’بلیک ہول‘ کو پر کرنے کے لیے ٹیکسوں میں اضافہ اور پبلک اخراجات میں کمی کرنا ناگزیر ہو گا۔

انھوں نے کہا کہ برطانیہ یورپی یونین کے باہر اتنے بڑے پیمانے کی پبلک سروسز کو رکھنے کا متحمل نہیں اور اس لیے ’ہمیں چادر دیکھ کر پاؤں پھیلانے چاہییں۔‘

اسی بارے میں