اسرائیلی فوجی نے ’غلطی‘سے فلسطینی کو گولی مار دی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ مقبوضہ غربِ اردن میں اس کے فوجیوں نے غلطی سے ایک فلسطینی شہری کو گولی مار کر ہلاک جبکہ متعدد کو زخمی کر دیا ہے۔

ایک بیان میں اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ فلسطینی مرکزی شاہراہ پر فوجیوں پر پتھر اور پٹرول بم پھینکے جا رہے تھے جس سے تین شہری زخمی ہوئے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ’ان فلسطینیوں کا پیچھا کرتے ہوئے غلطی سے عام شہریوں پر گولیاں چل گئیں‘۔

فلسطینیوں کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والا 15 سال کا لڑکا ہے جو اپنی گاڑی میں بیٹھا تھا جب اس کو گولی ماری گئی۔

اس سے قبل اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں ہلاک کیے جانے والے فلسطینی کے بارے میں کہا تھا کہ وہ حملہ آور تھا۔

اسرائیلی فوج نے کہا کہ اس واقعے کی تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے جو یروشلم کے باہر واقع گاؤں بیت سیرا میں پیش آیا۔

اسرائیلی میڈیا کے مطابق اس واقعے کا آغاز اس وقت ہوا جب تل ابیب اور یروشلم کو ملانے والی اہم شاہراہ پر فلسطینیوں کے پتھراؤ کے باعث دو غیر ملکی اور ایک اسرائیلی معمولی زخمی ہوئے۔

اسرائیلی فوج کے ابتدائی بیان میں کہا گیا تھا کہ بیت سیرا کے قریب موجود سکیورٹی اہلکاروں نے شاہراہ پر موجود گاڑیوں کی حفاظت کے لیے پتھراؤ کرنے والوں پر گولیاں چلائیں۔

بیان کے مطابق سکیورٹی فورسز نے تصدیق کی کہ فائرنگ کے نتیجے میں ایک حملہ آور ہلاک ہوا جبکہ دو مشتبہ حملہ آوروں کو گرفتار کیا گیا۔

تاہم بعد میں اسرائیلی فوج نے بیان میں کہا کہ ابتدائی انکوائری سے معلوم ہوا ہے کہ اس فائرنگ میں ایک عام شہری ہلاک ہوا۔

فلسطین کی سرکاری خبر رساں ایجنسی وفا اور قریبی گاؤں بيت عور التحتا کے میئر نے ہلاک ہونے والے لڑکے کی شناخت کی۔

بيت عور التحتا کے میئر عبدالکریم قاسم نے روئٹرز کو بتایا کہ محمود بدران دیگر مسافروں کے ہمراہ سوئمنگ پول سے واپس آ رہا تھا اور گاڑی میں بیٹھا تھا جب اس کو گولی کا نشانہ بنایا گیا۔

اسی بارے میں