وینزویلا میں خوراک کا بحران، شیروں کو کھانے کے لیے کدو

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption چڑیا گھروں میں شیروں کے لیے گوشت مہیا نہیں کیا جا رہا

وینز ویلا کے چڑیا گھروں میں موجود لگ بھگ 50 جانور گذشتہ چھ ماہ کے عرصے میں خوراک کی کمی کے باعث ہلاک ہو گئے ہیں۔

ریاست میں تفریح گاہوں کے ملازمین کی یونین کی سربراہ مارلین سیفونٹس نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ بعض جانور مرنے سے پہلے دو ہفتے تک بھوکے رہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کراکس کے چڑیا گھر میں شیروں اور چیتوں کو گوشت کے بجائے آم اور کدو کھانے کو دیے جا رہے ہیں۔

سرکاری حکام نے اس بات کی تردید کی ہے کہ جانور بھوک کی وجہ سے مر رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کئی جانوروں کو ہفتوں تک کھانا نہیں ملا
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مئی کے مہینے میں ایک چڑیا گھر میں تین جانور مرے
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption عملے کے ارکان ایک بندر کو سرنج کی مدد سے وٹامن دے رہے ہیں

دیگر شہروں میں تو چڑیا گھروں کی حالت اس سے بھی زیادہ بری بتائی گئی ہے جہاں مقامی تاجروں سے زبردستی جانوروں کے لیے پھلوں، سبزیوں ارو گوشت کے لیے عطیات لیے جا رہے ہیں۔

سیر گاہوں سے متعلق ریاستی ادارے میں ملازمین کی رہنما مارلین سیفونٹس کہنا تھا ’چڑیا گھر میں جانوروں کی حالت زار وینزبویلا کی مشکلات کی عکاس ہے۔‘

وینزویلا شدید مالی بحران کا شکار ہے جس کی وجہ سے وہاں خوراک کی کمی اور مسلسل لوٹ مار جاری ہے۔

صدر نکولس میڈورو کا الزام ہے کہ ملک میں جاری مسائل جنھیں وہ معاشی جنگ کا نام دیتے ہیں دراصل تاجروں اور حکومت کے مخالفین کی تخلیق کردہ ہے۔

ان کے مخالفین اس کا الزام حکومتی معاشی بدانتظامی اور تیل کی پیداوار پر بہت زیادہ انحصار پر عائد کرتے ہیں جس کی قیمتیں اب گر رہی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ایک چڑیا گھر میں موجود چھ ریچھوں کو ان کی درکار خوراک 16 کلو یومیہ کا نصف ہی مل پاتا ہے
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کئی جانور خوراک کی کمی کی وجہ سے کمزور ہو گئے ہیں

اسی بارے میں