پیراگوائے کا ’شاہانہ‘ قید خانہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاواؤ کے بیڈ روم میں ورزش کی مشین بھی موجود تھی

جنوبی امریکہ کے ملک پیراگوائے میں پولیس نے جب جیل میں قید ایک منشیات فروش کے قید خانے پر چھاپہ مارا تو دیکھا کہ وہ ایک شاہانہ زندگی گزار رہا تھا۔

تین کمروں پر مشتمل قید خانے میں ایک کانفرنس روم، پلازما سکرین ٹی وی، لائبریری اور کچن موجود تھا۔

پیراگوائے کے میڈیا کے مطابق اس قیدخانے میں برازیل کے مشیات فروش جاروس چمینیز پاواؤ قید تھے اور اب اس کے اندرونی حصے کو مسمار کر دیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہ سہولیات فراہم کرنے والے افسران کے خلاف تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے

پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ پاواؤ جیل کی دیوار میں دھماکہ خیز مواد سے سوراخ کر کے فرار ہونے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔

منی لانڈرنگ کے جرم میں قید پاواؤ کی سزا اگلے سال مکمل ہورہی تھی اور سزا پوری ہونے کے بعد ممکنہ طور پر انھیں برازیل کے حوالے کیا جاسکتا ہے۔

اب انھیں دارالحکومت اسنسیون کے قریب ٹاکمبو میں ایک خصوصی جیل میں منتقل کر دیا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption تین کمروں پر مشتمل قید خانے میں ایک کانفرنس روم، پلازما سکرین ٹی وی، لائبریری اور کچن موجود تھا

پاواؤ کی جیل کو شاہانہ انداز میں تبدیل کرنے کے حوالے سے تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے جس میں اس ملوث حکام سے تفتیش کی جائے گی۔

ٹاکمبو میں قیدیوں نے فرانسیسی خبررساں ادارے اے ایف ہی کو بتایا کہ اس آرام دہ جیل میں قیام کے لیے پاواؤ کو 5000 ڈالر فیس ایک بار اور ہفتہ وار کرایہ 600 ڈالر ادا کرنے ہوتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہاں قیام کرنے والے کو بھاری رقم ادا کرنا ہوتی تھی

ایک اور قیدی انتونیو گونزالیز نے اے ایف پی کو بتایا کہ ’وہ اس جیل میں سب سے زیادہ محبت کیے جانے والے شخص تھے۔‘

اس قیدخانے میں ایئرکنڈیشنگ کی سہولت، آرام دہ فرنیچر، کمرے کے ساتھ منسلک غسل خانہ اور ڈی وی ڈی کا ذخیرہ بھی موجود تھا۔

ڈی وی ڈیز میں ایک کولمبین منشیات فروش پابلو ایسکوبر کی زندگی پر بنائی گئی ایک ٹی وی سیریل بھی موجود تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption جیل میں کپڑوں کی الماری کا منظر

پابلو ایسکوبر کو انہ 1993 میں ہلاک کر دیا تھا اور کولمبین حکام کے ساتھ ایک معاہدے کے تحت انھیں ان کی مرضی کے مطابق جیل ڈیزائن کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ڈی وی ڈیز میں ایک کولمبین منشیات فروش پابلو ایسکوبر کی زندگی پر بنائی گئی ایک ٹی وی سیریل بھی موجود تھی
تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاواؤ کو ان کے جوتوں کے بغیر ہی دوسرے جیل منتقل کیا گیا
تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پیراگوائے میں عام طور پر جیلوں میں ایسی آرام دہ زندگی میسر نہیں آتی

اسی بارے میں