لیبیا کی فورسز کا دولت اسلامیہ کے ہیڈکوارٹر پر’قبضہ‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حکومتی فورسز کے اہلکار سرت شہر میں دولت اسلامیہ کے خلاف لڑ رہے ہیں

لیبیا کی ملیشیا جسے امریکہ کی حمایت حاصل ہے کا کہنا ہے کہ انھوں نے سرت شہر میں خود کو دولت اسلامیہ کہلانے والے شدت پسند تنظیم کے ہیڈکوارٹر کا کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

اقوام متحدہ کی حمایت یافتہ حکومت کی وفادار فورسز کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ’اواگدوگو (کنونشن) سینٹر ہمارے قبضے میں ہے۔‘

عراق اور شام کے باہر سرت دولت اسلامیہ کا سب سے مضبوط گڑھ تسلیم کیا جاتا ہے اور یہ شہر فروری سنہ 2015 سے اس شدت پسند تنظیم کے زیر کنٹرول ہے۔

حکومت حمایتی فورسز کا کہنا ہے کہ دولت اسلامیہ کے جنگجو اب بھی سرت شہر کے تین رہائشی مقامات اور سمندر کے قریبی ویلا کملیکس میں موجود ہیں۔

تاہم گذشتہ چند ہفتوں سے دولت اسلامیہ کے خلاف کیے جانے والے حملوں کا سب سے بڑا مقصد اواگدوگو سینٹر پر قبضہ حاصل کرنا تھا۔

ترجمان ردا عیسی کا کہنا ہے کہ فورسز نے سرت میں ابن سینا ہسپتال اور یونیورسٹی کیمپس کا کنٹرول بھی حاصل کر لیا ہے۔

انھوں نے مزید بتایا کہ اس دوران کم از کم تین اہلکار ہلاک اور کئی زخمی ہوئے ہیں جبکہ دولت اسلامیہ کے تقریباً 20 جنگجو ہلاک ہوئے ہیں۔

امریکی اندازے کے مطابق سرت شہر میں دولت اسلامیہ کے ایک ہزار کے قریب جنگجو ہیں جن میں سے زیادہ تر غیر ملکی اور عراق، شام لڑائی سے آنے والے ہیں۔

اس سے قبل دولت اسلامیہ سے منسلک نیوز ایجنسی کا کہنا تھا کہ دولت اسلامیہ نےسرت میں لیبیا کا ایک لڑاکا طیارہ مار گرایا ہے۔

حکومتی فورسز نے بتایا ہے کہ ایک طیارے سے ان کا رابطہ ختم ہو گیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق اس طیارے پر دو افراد سوار تھے۔

اسی بارے میں