’ٹرمپ انتخابی جائزوں کو ہرا سکتے ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption نائجل فراج امریکی ریاست مسی سپی میں جیکسن کے مقام پر 15 ہزار کے قریب رپبلکن حامیوں سے خطاب کر رہے تھے

برطانوی سیاسی جماعت یوکِپ کے سابق سربراہ نائجل فراج نے امریکہ میں رپبلکن ارکان سے کہا ہے کہ وہ پوری طرح تیار ہو کر باہر نکل آئیں اور پارٹی کے نامزد امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی مہم میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔

نائجل فراج امریکی ریاست مسی سپی میں جیکسن کے مقام پر 15 ہزار کے قریب رپبلکن حامیوں سے خطاب کر رہے تھے۔ وہاں ڈونلڈ ٹرمپ نے جلسہ کے شرکا سے ان کا تعارف بھی کرایا۔

نائجل فراج نے کہا کہ رپبلکن پارٹی اور اس کے صدارتی امیدوار انتخابی جائزوں کو شکست دے سکتے ہیں۔

مسٹر ٹرمپ نے، جو حالیہ انتخابی جائزوں میں حریف امیدوار ہِلیری کلنٹن کے مقابلے میں خاصے پیچھے ہیں، برطانیہ کے یورپی یونین چھوڑنے کی حمایت کی تھی۔

گذشتہ ہفتے ہی ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ انھیں جلد ہی مسٹر بریکسٹ کے نام سے پکارا جائے گا۔

مسٹر ٹرمپ نے نائجل فراج کا تعارف کراتے ہوئے کہا کہ ان کی جماعت نے ’زبردست‘ مہم کے ذریعے برطانیہ کی یورپی یونین کی 40 سالہ رکنیت کے خاتمے کے لیے عوامی حمایت حاصل کی۔

نائجل فراج نے اپنے خطاب کے آغاز میں کہا کہ وہ رپبلکن پارٹی کے لیے امید اور بہتر مستقبل کا پیغام لائے ہیں۔ انھوں نے مسٹر ٹرمپ کی صدارتی مہم کا بریکسٹ ریفرنڈم کے لیے چلائی جانے والی مہم سے موازنہ کیا۔

’اگر آپ اس ملک میں تبدیلی چاہتے ہیں تو آپ اپنے پیدل چلنے کے بوٹ پہنیں اور انتخابی مہم کے لیے باہر نکل آئیں۔ اور یاد رکھیں کہ اگر کافی تعداد میں لوگ اسٹیبلشمنٹ کا مقابلہ کرنے کے لیے اٹھ کھڑا ہونے پر آمادہ ہو جائیں تو ہر کامیابی ممکن ہو جاتی ہے۔‘

’آپ رائے عامہ کا جائزہ لینے والی کمپنیوں، تجزیہ کاروں اور واشنگٹن سب کو شکست دے سکتے ہیں۔‘

فراج نے گذشتہ ماہ کلیولینڈ میں ہونے والے رپبلکن کنونشن میں بھی شرکت کی تھی۔ وہ ماضی میں یہ کہتے رہے ہیں کہ وہ صدارتی دوڑ میں ڈونلڈ ٹرمپ کی حمایت کرنے کے چکر میں نہیں آئیں گے۔

تاہم جیکسن میں انتخابی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ اگر وہ امریکی ہوتے تو وہ کبھی بھی مسز کلنٹن کو ووٹ نہ دیتے چاہے اس کے لیے انھیں پیسوں کی پیش کش ہی کیوں نہ کی جاتی۔

اسی بارے میں