شام کے چار برس سے محصور شہر داریا سے انخلا شروع

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption شہر سے روانہ ہونے والی پہلی بس میں زیادہ تر بچے، عورتیں اور عمر رسیدہ افراد سوار تھے

شام میں فریقین کے درمیان چار سالہ محاصرہ ختم کرنے پر اتقاق کے بعد داریا شہر سے شہریوں اور باغی جنگجوؤں کا انخلا شروع ہوگیا ہے۔

جب پھنسے ہزاروں شہریوں سے بھری پہلی بس درایا سے روانہ ہو ئی تو ایمبولنسیں اور ہلالِ احمر کی گاڑیاں اس کے ہمراہ تھیں۔

باغی جنگجو باغیوں کے زیر کنٹرول شہر ادلب جائیں گے جبکہ عام شہریوں کو حکومت کی طرف سے قائم کردہ امدادی کیمپوں میں لے جایا جائے گا۔

شام کی سکیورٹی فورسز نے سال 2012 میں درایا کا محاصرہ کیا تھا اس کے بعد سے شہر پر مسلسل بمباری کی جاتی رہی ہے جس کے باعث شہریوں کو خوراک، پانی اور بجلی کی قلت کا سامنا تھا۔

ان چار برسوں کو شہر میں محصور شہریوں کو رواں برس جون میں امدادی سامان کی فراہمی ممکن ہو سکی تھی۔

Image caption جب پپہلی بس درایا سے روانہ ہو ئی تو ایمبولنسیں اور ہلالِ احمر کی گاڑیاں اس کے ہمراہ تھیں۔

شام کے سرکاری میڈیا کے مطابق معاہدے کے تحت شہر میں موجود 700 سو مسلح افراد باغیوں کے زیر قبضہ شہر ادلیب چلے جائیں گے جبکہ چار ہزار شہری سرکاری پناہ گاہوں میں منتقل ہو جائیں گے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق شہر سے روانہ ہونے والی پہلی بس میں زیادہ تر بچے، عورتیں اور عمر رسیدہ افراد سوار تھے۔

شام کے لیے اقوامِ متحدہ کے خصوصی نمائندے کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں خبردار کیا گیا ہے کہ یہ ضروری ہے کہ کسی بھی انخلاء میں درایا کے شہریوں کا حفاظت کی جائے اور اس بات کا خیال رکھا جائے کہ انخلاء رضاکارانہ بنیادوں پر ہو۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اقوام متحدہ نہ تو انخلاء کے اس منصوبے کا حصہ ہے اور نہ ہی اس سلسلے میں اس سے کوئی مشورہ کیا گیا ہے۔ لیکن انہوں نے کہا کہ دنیا اسے دیکھ رہی ہے۔

حکومتی افواج کی جانب سے اس شہر کے طویل محاصرے کے بعد وہاں موجود باغیوں اور عام شہریوں کے انخلا کے حوالے سے معاہدہ طے پایا ہے جس کے تحت شہر سے انخلا کا عمل جمعہ کو شروع ہو رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP Getty
Image caption درایا پر مسلسل بمباری کی جاتی رہی ہے جس کے باعث شہریوں کو خوراک، پانی اور بجلی کی قلت کا سامنا تھا۔

شام میں 2011 میں شروع ہونے والے تنازع میں داریا ان شہروں میں شامل ہے جہاں سب سے پہلے صدر بشارالاسد کے خلاف احتجاجی مظاہرے کیے گئے تھے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ دمشق سے چند کلومیٹر دور واقع داریا شہر سے باغیوں کے انخلا سے شامی صدر کا حوصلہ بڑھے گا۔

درایا سے انخلاء کا عمل ایک ایسے وقت ہو رہا ہے جب امریکی سیکریٹری خارجہ جان کیری اپنے روسی ہم منصب کے ساتھ جینیوا میں شام کے مسئلے پر مذاکرات کر رہے ہیں۔

مذاکرات کا بنیادی مقصد الیپو میں عارضی جنگ بندی پر اتفاق رائے پیدا کرنا ہے جہاں حکومت اور باغی جنگجوؤں کے درمیان لڑائی میں حالیہ ہفتوں میں شدت آئی ہے جس کے نتیجے میں سینکڑوں افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں