امریکہ کا ترکی اور کرد افواج کی لڑائی بند ہونے کا خیر مقدم

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

امریکہ نے شام میں ترکی اور کرد افواج کے درمیان لڑائی رکنے کا خیر مقدم کرتے ہوئے خود کو دولتِ اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم کے خلاف جنگ پر توجہ مرکوز کرنے پر زور دیا ہے۔

امریکہ کے ایک فوجی ترجمان نے ترکی اور کرد افواج کے درمیان ہونے والے ’کمزور معاہدے‘ کے بارے میں امید ظاہر کی کہ یہ مضبوط ہو گا۔

٭ ْکرد جنگجوؤں کے خلاف ترکی کی کارروائی پر امریکی انتباہ

٭ شام میں ترکی کے فضائی حملے میں 25 شدت پسند ہلاک

کردش ذرائع کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے معاہدہ ہوا ہے تاہم ترکی کے حمایت یافتہ باغی کمانڈر نے اسے مسترد کر دیا ہے۔

خیال رہے کہ امریکہ کا کہنا ہے کہ شام میں ترکی اور ترک حامی جنگجوؤں کی کرد فورسز کے ساتھ جاری جنگ ’ناقابلِ قبول ہے‘ اور اسے فوری طور پر بند ہونا چاہیے۔

ترکی کی افواج گذشتہ ہفتے سے سرحد عبور کر کے گردش جنگجوؤں کے خلاف حملے کر رہی ہیں۔

امریکی سینٹرل کمانڈ کے کرنل جان تھامس کا کہنا تھا کہ گذشتہ چند گھنٹوں کے دوران ہمیں تمام فریقین سے ضمانت ملی ہے کہ وہ ایک دوسرے پر حملے بند کر کے دولتِ اسلامیہ کے خلاف جاری لڑائی پر توجہ مرکوز کریں گے۔

انھوں نے کہا ’آنے والے چند دنوں کے لیے یہ ایک کمزور معاہدہ ہے تاہم ہمیں امید ہے کہ یہ مضبوط ہو گا۔‘

امریکی وزرات خارجہ کے ترجمان جان کربی نے کہا ہے کہ ہم اس پر کوئی تبصرہ نہیں کریں گے تاہم ان کا کہنا تھا کہ جھڑپیں رک گئی ہیں اور ہم یہی چاہتے تھے۔

انھوں نے کہا ’ہم انھیں ایک دوسرے کے خلاف لڑتا ہوا نہیں دیکھنا چاہتے بلکہ ہم یہ دیکھنا چاہتے ہیں کہ ہر کوئی دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑائی پر توجہ مرکوز کرے۔‘

اسی بارے میں