ناول بچانے کے لیے مصنف آگ میں کُود گیا

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption گیڈین ہوج خود کو ایک ڈرامہ نگار، ناول نگار اور اداکار کہتے ہیں

امریکی ریاست لوزیانے کے شہر نیو اورلیانز میں ایک مصنف نے اپنا لیپ ٹاپ بچانے کے لیے جان کی بازی لگا دی اور بے خطر اپنے جلتے ہوئے گھر میں گھس گئے۔

وہ اپنا لیپ ٹاپ اس لیے بچانا چاہتے تھے کہ اس میں ان کے دو مکمل ناول تھے۔

35 سالہ مصنف گیڈین ہوج نے نیو اورلیانز ایڈووکیٹ کو بتایا: ’جس کسی نے کبھی کوئی فن پارہ تخلیق کیا ہو وہ جانتا ہے کہ اس کا کوئی بدل نہیں ہوتا۔‘

اطلاعات کے مطابق وہ اپنے لیپ ٹاپ کو بچانے میں کامیاب ہو گئے اور انھیں کوئی زخم نہیں آئے۔

انھوں نے کہا: ’اس (لیپ ٹاپ) میں میرے زندگی کی بہت زیادہ تخلیقات ہیں۔‘

وہ خود کو ایک ڈرامہ نگار، ناول نگار اور اداکار کہتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عمارت کی آگ میں ایڈرین ولیمز سوائے پرس اور چابی کے کچھ نہ بچا سکے

نیو اورلینانز کے فائر محکمے کے ٹموتھی میککونل نے کہا: ’یہ آگ بہت خطرناک ہو سکتی تھی لیکن ہمارے آگ بجھانے والے عملے نے بہت عمدہ کام کیا۔‘

لیکن 38 سالہ ایڈرین ولیمز صرف اپنا پرس اور چابیاں لینے میں ہی کامیاب ہو سکے۔ وہ اس عمارت میں رہنے والے چار افراد میں سے ایک تھے۔ وہ اپنا کوئی بھی سامان نہیں بچا سکے اور ان کے پاس کوئي انشورنس بھی نہیں ہے۔

انھوں نے کہا: ’مجھے پتہ نہیں کہ میں کیا محسوس کر رہا ہوں۔ بس اتنا جانتا ہوں کہ مجھے پھر سے اٹھنا ہے اور آگے بڑھنا ہے۔‘

یہ کہا جا رہا ہے کہ آگ پڑوس کے ایک خالی گھر سے شروع ہوئي اور قریبی عمارت میں پھیل گئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption مکان میں آگ لگنے کی صورت میں پہلے جان بچانے کی فکر کرنی چاہیے بعد میں کچھ اور

سیاہ دھوئیں کو دور سے دیکھا جا سکتا تھا جبکہ آگ بجھانے والے دیر تک اس سے لڑتے رہے۔

آگ کے ماہرین بتاتے ہیں کہ آگ لگنے کی صورت میں لوگوں کو صبر و تحمل سے کام لینا چاہیے اور جلد از لوگوں کو وہاں سے نکالنے کی کوشش کرنا چاہیے اور جان کی بازی لگا کر سامان کو بچانے کی فکر نہیں کرنی چاہیے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں