امریکہ: ٹی وی پر صدارتی مباحثے کے ریکارڈ ناظرین

Image caption دنیا بھر میں لاکھو لوگوں نے اس بحث کو براہ راست انٹرنیٹ پر نشر ہوتے بھی دیکھا جبکہ بہتوں نے بار یا پھر مختلف پارٹیوں میں اجتماعی طور پر دیکھا

امریکہ میں صدارتی انتخابات کے لیے ہلیری کلنٹن اور ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان گذشتہ روز ہونے والے پہلے مباحثے کو ٹی وی پر تقریباً آٹھ کروڑ 40 لاکھ افراد نے دیکھا اور یہ ایک نیا ریکارڈ ہے۔

اس سے پہلے سنہ 1980 میں جمی کارٹر اور رونالڈ ریگن کے درمیان ہونے والی صدارتی مباحثے کا شمار تاریخ میں سب سے زیادہ دیکھے جانے والے صدارتی مباحثے میں ہوتا تھا۔ اس مباحثے کو آٹھ کروڑ سے زیادہ لوگوں نے دیکھا تھا۔

امریکہ میں جمع کیے گئے اعدادوشمار کے مطابق ہلیری کلنٹن اور ڈونلڈ ٹرمپ کے مابین ہونے والے صدارتی مباحثے کو ٹی وی پر دیکھنے والے صرف اُن ناظرین کو شامل کیا گیا ہے کہ جنھوں نے مباحثہ صرف 13 امریکی ٹی وی چینلوں پر براہ راست دیکھا۔

اس کا مطلب یہ ہوا کہ اصل تعداد اس سے بھی کہیں زیادہ ہے کیونکہ بہت سے لوگوں نے دنیا کے دیگر حصوں میں بھی اس کو دیکھا ہے۔

تخمینے کے مطابق دنیا بھر میں لاکھوں افراد نے اس بحث کو براہ راست انٹرنیٹ پر نشر ہوتے ہوئے دیکھا جبکہ کئی افراد نے یہ مباحثہ مختلف بارز یا پھر اجتماعی گروہ کی شکل میں دیکھا۔

ڈیٹا فراہم کرنے والی کمپنی نیلسن کا کہنا ہے کہ بیشترً ناظرین نے 98 منٹ تک جاری رہنے والی اس بحث کو مکمل طور یعنی شروع سے آخر تک دیکھا۔

منگل کو اس بارے میں بات کرتے ہوئے مسٹر ٹرمپ نے کہا تھا کہ انھیں معلوم تھا کہ یہ بحث و مباحثہ لوگ بڑی تعداد میں دیکھیں گے اور ’ٹی وی کی تاریخ میں ناظرین کی یہ بڑی تعداد میں سے ایک ہوگا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption آٹھ نومبر کو ہونے والے صدارتی انتخابات سے قبل ابھی ہلیری کلنٹن اور ٹرمپ کے درمیان ٹی وی پر دو اور، نو اور 19 اکتوبر کو، مباحثے ہونے باقی ہیں

امریکہ میں سنہ 2015 میں نیشنل فٹبال لیگ کی سپر باؤل مقابلے میں، نیو انگلینڈ اور سیئیٹل کے درمیان کھیل، کو اب تک کے سب سے زیادہ، یعنی تقریباً 11 کروڑ چالیس لاکھ ناظرین ٹی وی پر دیکھ چکے ہیں اس طرح صدارتی مباحثے کی تعداد اب سب سے زیادہ ہے۔

آٹھ نومبر کو ہونے والے صدارتی انتخابات سے قبل ہلیری کلنٹن اور ٹرمپ کے درمیان دو ٹی وی مباحثے ہونا باقی ہیں اور یہ مباحثے نو اور 19 اکتوبر کو منعقد ہوں گے۔

نو اکتوبر کو صدارتی مباحثے اور این ایف ایل کی دو بڑی ٹیموں، گرین بے پیکرز اور نیو یارک جائنٹ، کے درمیان میچ ایک ہی وقت میں ہوگا۔اس طرح یہ دیکھنا پڑے گا کہ ناظرین فٹبال میچ جو ترجیح دیتے ہیں یا صدارتی مباحثے کو۔

پہلی بحث میں کس امیدوار کا پلڑا بھاری رہا ہے ابھی یہ تصویر پوری طرح سے واضح نہیں ہے لیکن آنے والے دنوں میں اس سے متعلق سنجیدہ جائزے آنے کی توقع کی جا رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption محترمہ کلنٹن کا کنا ہے کہ انھیں لگتا ہے کہ پہلی بحث سے ان کے اور مسٹر ٹمپ کے درمیان اہم اختلافات اجاگر ہوئے

منگل کو ہلیری کلنٹن نے کہا کہ انھیں لگتا ہے کہ پہلی بحث سے اُن کے اور ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان اہم اختلافات اُجاگر ہوئے۔

اس بارے میں مسٹر ٹرمپ سے جب پوچھا گیا کہ انھوں نے ٹی وی پر ہونے والی بحث سے کیا محسوس ہو؟ جس کے جواب میں ٹرمپ نے کہا کہ یہ اچھا رہا ہے لیکن انھوں نے شکایت کہ ٹی وی میزبان لیسٹر ہالٹ نے کلنٹن کے سکینڈلز پر زیادہ زور نہیں دیا۔

ٹرمپ نے کہا کہ ان کا دل چاہ رہا تھا کہ بحث میں وہ بل کلنٹن کے بہت سارے افیئر کے بارے میں بات کریں لیکن چونکہ ناظرین میں ہلیری کلنٹن کی بیٹی چیسلی کلنٹن بھی بیٹھی تھیں اس لیے انھوں نے ایسا نہیں کیا۔

انھوں نے کہا: ’میں کئی طرح سے ان پر اور تگڑا وار کرتا۔ میں حقیقی طور پر تھوڑا نرم پڑ گیا کیونکہ میں کسی کے جذبات کو ٹھیس نہیں پہنچانا چاہتا۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں